Sunday, July 14, 2013

Khwaja Javed Akhtar

1 comment:

Ahmad Ali said...


یادِ رفتگاں : بیاد خواجہ جاوید اختر
احمد علی برقی اعظمی
چل دئے خواجہ جاوید اختر بھی اب
بجھ گئی ناگہاں شمعِ بزمِ ادب

اُن کا رنگِ تغزل تھا بیحد حسیں
لوگ گِرویدہ اُن کے نہ تھے بے سبب

بزمِ شعر و سخن کی تھے وہ آبرو
اُن کا ممنون ہو کیوں نہ عصری ادب

فن سے ملتی ہے فنکار کو زندگی
کام آتا نہیں کچھ بھی نام و نسب

چھوڑ دیتا ہے جب عالمِ آب و گِل
قدر ہوتی ہے فنکارِ اعظم کی تَب

اک جوانسال فنکار رخصت ہوا
گردشِ وقت نے کیسا ڈھایا غضب

باندھ لے اپنا برقی تو رختِ سفر
جتنے آئے ہیں اک روز جائیں گے سب