Saturday, February 16, 2008

تازہ ترین تصنیف " عظمت کے نشاں " پر ڈاکٹر احمد علی برقی اعظمی کا منظوم تبصر

تازہ ترین تصنیف " عظمت کے نشاں " پر ڈاکٹر احمد علی برقی اعظمی کا منظوم تبصرہ
الیاس اعظمی کی یہ عظمت کے ھیں نشاں
روشن ھیں اس کتاب میں جو مثل کھکشاں
طرز بیاں ے اس کا دل انگیز اور روا ں
جس طرح موجزن ھو کوئی بحر بیکراں
اھل نظر کے ذوق کی آئیینہ دار ھے
سب کے لئے ھے لذ ت کام و دھن یھاں

ارباب علم و فضل کا ھے اس میں تذکرہ
ھیں مھر و ماہ شعر و ادب اس میں ضوفشاں
حسن بیاں ھے اس سے مصنف کا آشکار
جو ھے سخن شناس، اد ب دوست ، نکتہ داں
گلھای رنگا رنگ کا گلد ستہ حسیں
مشاطہ سخن ھے برائے سخن وراں
ھر جا ھیں آ شکار تراکیب دلنشیں
اب دیکھئے ٹھر تی ھے جا کر نظر کھاں
دار المصنفین سے ھیں جو بھی منسلک
وہ لوگ ھیں روایت شبلی کے پاسباں
شبلی جھان شعر و اد ب میں وہ نام ھے
جسکے بغیر اد ھوری ھے ارد و کی داستاں
شبلی اکیڈ می کا جو ھےترجمان آج
یہ بات ماھنامہ " معارف " سے ھے عیاں
ھوتے رھیں گے اھل نظر اس سے فیضیاب
عرفان و آگھی کا یہ ھے گنج شا یگاں
یہ بھی انھیں کے نقش قد م پر ھیں گامزن
یہ قافلہ ھے جانب منزل رواں دواں
کر تا ھے پیش ھد یہ تبریک و تھنیت
احمد علی ھے اس کے محاسن کا قدرداں

No comments: