Saturday, February 16, 2008

ھے وزون کی تہ حفاظت کا خول

ھے وزون کی تہ حفاظت کا خول
از
ڈ اکٹر احمد علی برقی اعظی ، ذاکر نگر، نئی دھلی

تباھی کی زد میں ھے اوزون ھول
نھیں آج اس پر کوئی کنٹر ول
زمیں پر ھے جب تک یہ سایہ فگن
مسلط نہ ھو گاکبھی ایرو سول
تمازت ھے سورج کی سوحان روح
ھے اوزون کی تہ حفاظت کا خول
توازن میں ھو تے ھی اس کے خلل
نہ قائم رھے گا کو ئی کنٹر و ل
یہ سطح زمیں پر ھے نقصا ن دہ
خلاء میں ھے لیکن اھم اس کا رول
اسی سے صحتمند ھے ھر بشر
صحت کا نھیں ھے کھیں کوئی مول
بنفشی شعاؤ ں کا فطر ی عمل
نہ ماحول میں دے کھںزھر گھو ل
نہ برھم ھو اس سے نظام حیا ت
سبھی کو ھے کر نا ادا اپنا رول
جو ھیں آج دنیا می بیدار مغز
فقط خد مت خلق ھے ان کا گول
صحت کا ھے احمد جھاں تک سوال
ھے اس ضمن میں نا روا تول مول

No comments: